Roohaniyat ka Hamil

عہد رسالت اور عہد صحابہ وتابعین میں تصوف اپنے ارتقائی عمل میں تھا۔ اس میں زیدوورع اور تقو یٰ کا رنگ غا لب تھا۔ اس دور میں صحابہ اکرم سے صحاب صفہ اور تابعین سے امام حسن بصری، ادیس قرنی، امام زین العابدین، سعدبن مسیب، عاوس یمانی، داودبن دینار، سلمان عینمی، اور محمد بن سنکدر کے اسماء قابل ذکر ہیں۔
عید تابعین کے بعد دوسری تیسری صدی میں اہل حق نے اخلاص فی العمل کی خاطر مجاہد ہ نفس کی طرف رجوع کیا اور ریافت و مجاہدہ کے ذریرے تعلق باللہ کی نسبت پختہ کی مجاہدہ نفس کی وجہ سے انہیں مفتی و بے خودی کشف و اشراف، اس وحشت اور خو ارق ق کرامات کی صورت میں باطنی کیفیات حاصل ہو تیں ان میں رابعہ بصری جیب عجمی، مالک بن و دینار، فضل بن عیاض، عبداللہ بن مبارک،ابراھیم بن ادھم، بشر الحافی، شیبان راعی، ذوالنون مصری، حارث الحاسہی، بانیر چو بسطامی، سری سفطی، جنید بغدادی اور سہل بن عبد اللہ لنتزی و غیرہ ھم کے اسماء قابل ذکر ہیں۔
چوتھی اور پانچویں صدی ہجری صدی میں خواص الخواص اعمال واحوال سے گزرکر” مقام جذب “تک پہنچے اسی جذب کی وجہ سے ان پر نسبت توجہ کا راسۃ منکش ہوا۔ اور انہوں نے مشاہدہ حق تک رسائی حاصل کی، اور انہیں ذات حق میں محویت و استفراق نصیب ہوا۔
شیخ ابو سعید خزار، ابوالحسن خرتانی، ابو علی رودباری، ابو الفرح طرطوسی، ابو بکر شلبی، ابو القاسم فنیشری۔ امام غزالی اور حضرت سیدنا شیخ عبد القادر جیلانی کے نام قابل ذکر ہے
چھٹی اور ساتویں صدی ہجری میں صو فیا و کرام نے باطنی واردات کے ذریعے حاصل شدہ تصور حقیقت کی نظری تسکیل کی۔ حقائق تصوف اور وحدت الوجود پر دلائل سامنے آئے۔
شیخ اکبر محی الدین ابن عربی، شیخ ابن عزلی، شیخ ابن الفارصی الحصوی، شیخ عطار، عارف رومی اور مولانا جامی کے اسماء قابل ذکر ہیں۔
روحانیت کے حاملین کا راحانی اور قلبی فیوضو برکات کا یہ سلسہ آج تک جاری و ساری ہے۔

Sufism was in its evolutionary process in the Testament and covenant companions. This was the color of zeal and devotion. In this period, the companions of Imam Sahib Basri, Edith Qarni, Imam Zain al-‘Abbas, Saadin Masib, Aausa Yemeni, Dawood bin Dinar, Salman Aminami, and Muhammad Bin Sindar from Sahaba Sahih and Rabi-bin are remarkable. Roohaniyat ka Hamil

After the Eid period, the rightful right in the second century, towards the sincerity towards the Mujahid-e-Jinn, turned towards Mu’awiyah and due to the intention of worshiping the majesty of the majesty, he became independent and self-discovery, In the case of horror and intimidation, there are inherent conditions, including Rabia Basir Pocket Azimi, Malik bin Din Dinar, Fazal ibn Aiyaz, Abdullah bin Mubarak, Ibrahim ibn Adham, Humayahu, Shayban Raihi, Zuhunun Misri, Harris alashi, Baner Chu Basitami, Sri Safi, Jinnid Baghdadi and Sahil Bin Abdul Latanzai and non-Muslim scholars are also remarkable.
During the fourth and fifth century, the pilgrimage reached the “place absorption” in the century, due to this absorption, Rasaa became attractive. And they have access to the right to observe, and they have been entrusted with the power of worship.

Shaykh Abu Saeed Khazar, Abul Hasan Khratani, Abu Ali Rudabari, Abu Al-Baqarati, Abu Bakr Shalli, Abu al-Qasim Fainishi. The name of Imam Ghazali and Hazrat Sadiena, Sheikh Abdul Qadir Jilani is remarkable.

In the sixth century and seventh century, the idea of Sufism in the seventh century conquered the ideology of reality. Facts on facts and beliefs come true.

Sheikh Akbar Mohi-ud-Din Ibn Arab, Shaykh Ibn Uzli, Shaykh ibn Al-Ansari al-Azawi, Shaykh Atar, Arif Rumi and Asmaa of Maulana Jami are remarkable.

The story of the spiritual holder and this series of charity gifts continues till date.

Read More 

error: Content is protected !!